پٹھانوں کی حکومت کا پٹھانوں کے ہاتھوں خاتمہ

سلطان بہلول لودھی کا دادا ملک بہرام تلاش معاش میں ہندوستان آیا اور حاکم ملتان کی ملازمت میں منسلک ہوکر وہیں تووطن اختیار کرلیا۔ بہلول کے باپ ملک کالا کو خضر خاں نے دورالا ( نزد سرہند ) کا حاکم بنا دیا تھا۔ ملک کالا کی بیوی جو اس کے چچا کی بیٹی تھی اس کے وضع حمل کا زمانہ قریب تھا کہ مکان کی چھت گرنے سے دب کر مرگئی مگر قدرت خدا سے بچہ زندہ رہا جسے مردہ عورت کا پیٹ چاک کرکے نکال لیا گیا۔ اس بچہ کو پیار سے گھر والے بلو کہتے تھے یہی بلو اگے چل کر لودھی پٹھانوں کی حکومت کا بانی بنا اور سلطان بہلول کے نام سے مشہور ہوا۔ جب بہلول کا باپ ملک کالا ایک لڑائی میں مارا گیا تو بہلول اپنے چچا اسلام خاں کے ہاں سرہند چلا گیا۔ اسلام خاں نے اپنی بیٹی شمس خاتون کی شادی بہلول سے کردی اور اس کی قابلیت اور بہادری کو دیکھ کر اپنے بیٹوں کے بجائے اسے اپنا جانشین نامزد کردیا۔

سلطان محمد شاہ ( خاندان سید ) المتوفی ۸۴۹ھ /  ۱۴۴۵ء نے پٹھانوں کو سرہند سے بیدخل کرنے کے لئے سکندر نحقہ   اور جرت کہکڑ کو سرہند بھیجا۔ جرت کہکڑ نے بہلول کے چچا ملک فیروز کو قرآن پاک پر عہد کرنے کے باوجود فریب سے گرفتار کرلیا اور اسکے بہت سے ہمراہیوں کو قتل کرادیا۔ جب اس حادثہ کی خبر سرہند میں پٹھانوں کو پہنچی تو ملک فیروز کے فرزند شاہین خاں نے پٹھانوں کے اہل و عیال کو بہلول کے ہمراہ محفوظ مقام پر بھیج دیا اور خود پٹھانوں کی جمعیت کے ساتھ شاہی لشکر پر حملہ آور ہوا۔ اس جنگ میں شاہیں خاں اور بہت سے پٹحان مارے گئے اور شاہی لشکر کو شدید نقصان پہونچا۔ جب پٹھانوں کے کٹے ہوئے سر جرت کہکڑ کے سامنے لائے گئے تو وہ ایک ایک سر اُٹھا کر ملک فیروز سے نام دریافت کرتا جاتا تھا۔ جب ملک فیروز کے فرزند شاہین خاں کا سر سامنے آیا تو ملک فیروز نے کہا کے میں اسے نہیں جانتا کہ یہ کون ہے، یہ سن کر شاہی لشکر کے آدمیوں نے کہا کہ یہ شخص بڑا بہادر تھا۔ اس نے جنگ میں بڑی دلیری دکھائی اور ہمارے لشکر کے بہت سے آدمیوں کو قتل کیا۔ یہ سن کر ملک فیروز رونے لگا۔ جرت کہکڑ نے رونے کی سبب دریافت کیا تو ملک فیروز نے جواب دیا کہ یہ میرے بیٹے کا سر ہے، میں نے پہلے اس خیال سے نہیں بتایا کہ میدان جنگ میں اس سے اظہار بزدلی ہوا ہو جسے سنکر مجھے شرمندہ ہونا پڑے۔ اب مجھے اطمینان ہو کہ یہ بہادر پٹھان تھا۔ جس نے پٹھانوں کے شایان شان بہادری کا مظاہرہ کیا۔

تاریخوں میں یہ بات مشہور ہے کہ بہلول سمانا میں ایک مجزوب درویش کی خدمت میں حاضر ہوا۔ درویش نے بہلول کی جانب مخاطب ہوکر کہا کہ کون ہے جو دہلی کی بادشاہت دوہزار ٹنکہ میں خریدنا چاہتا ہے۔ بہلول نے سولہ سو ٹنکہ جو اس کے پاس تھے درویش کے سامنے رکھ دیئے۔ مجزوب درویش نے بہلول کی نزر قبول کی اور بادشاہت کی مبارک باد دی۔ اس بات سے بہلول کے ساتھیوں نے اس کا مذاق اڑایا تو بہلول نے جواب دیا کہ اگر درویش کی بات سچی ہوئی تو سودا بہت ہی سستا رہا۔ اگر صحیح ثابت نہ ہوئی تو درویش کی خدمت بھی کار ثواب ہے۔

چنانچہ اس واقعہ کے بعد بہلول کے سر میں بادشاہت کا سودا سمایا جس نے پٹھانوں کی ایک جماعت فراہم کرکے اول سرہند پر قبضہ جمایا اور بعد میں حکمت عملی سے دہلی میں حمید خاں کو قید کرکے اور سلطان علاوالدین (خاندان سید) کو دہلی سے نکال کر ۸۵۵ھ / ۱۴۵۱ء میں تخت دہلی پر قبضہ کرلیا اور بلو سے سلطان بہلول لودھی بن گیا۔ یہ وہ زمانہ تھا جس میں پٹھانوں کے اقبال کا ستارہ ہندوستان میں عروج پر تھا اور فتح و نصرت ان کی رکاب کو بوسہ دے رہی تھی۔                                                                                                                                                                         تخت نشین ہونے کے کچھ عرصہ بعد بہلول ملتان اور پنجاب کے انتظام کے لئے چلا گیا پیچھے سے محمود شرقی المتوفی ۸۶۱ھ / ۱۴۵۶ء نے میدان خالی پاکر لشکر عظیم کے ساتھ دہلی پر حملہ کردیا۔ دہلی میں پٹھانوں کی تعداد بہت کم تھی جو ایک بڑے تیاری لشکر کا مقابلہ نہیں کرسکتی تھی۔ اس وجہ سے پٹھان معہ اہل و عیال قلعہ میں پناہ گزین ہوگئے۔ بہلول کی ساس بی بی متو نے مردوں کی کمی پوری کرنے کو قلعہ میں موجود تمام عورتوں کو مردانہ لباس پہنا کر لڑنے کے لئے کھڑا کردیا۔ جو قلعہ کی دیوار پر سے دشمن پر تیر باری اور سنگ باری کرتیں۔ جب بہلول کو دیپال پور میں محمود شرقی کے دہلی پر حملہ کی اطلاع ملی تو اس نے وہی سے تیز رفتار قاصد اس پیغام کے ساتھ افغانستان بھیجے کہ اللھ تعالٰی نے دہلی کی بادشاہت پٹھانوں کو عطا فرمائی ہے مگر سلاطین ہند انہیں یہاں سے نکالنا چاہتے ہیں۔ اس وقت پٹھانوں کے اہل و عیال قلعہ دہلی میں محصور ہیں، مستورات کی شرم ہماری اور آپکی ایک ہے۔ شرم اور ناموس کا اقتضا یہ ہے کہ اپ اپنے قبیلوں کے ساتھ یہاں آئیں اور اپنے ناموس کی حفاظت کریں اور یہ بھی لکھا کہ جب یہاں آو گے تو اتنی دولت پاو گے کہ بھول کر بھی اپنے وطن کو یاد نہیں کرو گے۔ اس پیغام کے ملتے ہی پٹھانوں کے قبائل شروانی، شیرانی، لوحانی، پنی اور ناغڑ بہ سرعت تمام ہندوستان پہنچے چونکہ ناغڑ پٹھان لودھیوں سے قرابت قریبہ رکھتے تھے، یعنی ناغڑوں کے جد اعلٰی ناغڑ ابن دانی کی شادی عبد الرحٰمن خاں لودھی کی دختر سراج بانو سے ہوئی تھی۔ نیز احمد خاں ولد عبدل خاں بہلول کے امراء میں تھے۔ لہذا ایسے موقع پر قبیلہ ناغڑ کے پٹھانوں کا سلطان بہلول کی مدد کو پہنچنا لازمی امر تھا. چنانچہ یونس خاں ولد احمد خاں ناغڑ پٹھانوں کی جمیعت کے ساتھ ۸۵۶ھ / ۱۴۵۲ء میں ہندوستان پہنچے اور ان سب لڑائیوں میں شریک ہوئے جو سلطان بہلول اور شاہان شرقی کے درمیان ۸۵۷ھ / ۱۴۵۳ء سے ۸۷۸ھ / ۱۴۷۳ء تک ہوتی رہیں۔
                                                                                                                                                    حسین شاہ شرقی جو دیڑھ لاکھ فوج کے ساتھ دہلی پر چڑھ آیا تھا، سلطان بہلول نے اس سے صلح کی درخواست کی اور ہر چند کوشش کہ کہ جنگ نہ ہو مگر حسین شاہ کے سر میں کثرت فوج کا نشہ سوار تھا۔ اس نے غرور تکبر سے صلح کا پیغام ٹھکرا دیا۔ آخر مجبور ہوکر سلطان بہلول جنگ کے لئے تیار ہوا اور اٹھارہ ہزار پٹھانوں کے مختصر لشکر کے ساتھ جو بلحاظ تعداد ایک اور چھ کا مقابلہ تھا جمنا کو عبور کیا اور اپنے لشکر کے ساتھ جو سب گھوڑ سوار تھے حسین شاہ کے لشکر پر ٹوٹ پڑا۔ اس اچانک حملہ سے حسین شاہ اور اس کا لشکر اس قدر پریشان ہوا کہ سوائے فرار چارہ نہیں دیکھا۔ اس بدحواسی کے عالم میں حسین شاہ اپنے حرم کو بھی ساتھ نہ لیجا سکا۔ جنھیں بعد میں سلطان بہلول نے اپنے سپاہیوں کی حفاظت میں عزت و آبرو کے ساتھ حسین شاہ کے پاس بھیجدیا۔                                                                                                                                                                                                                             سلطان بہلول کے بعد اس کا فرزند نظام خاں، سلطان سکندر کے نام سے ۸۹۴ھ / ۱۴۸۸ء میں باپ کی جگہ تخت نشین ہوا۔ سکندr ایک سنار کی لڑکی بہیما جس کا اسلامی نام زیبا خاتون رکھا کے بطن سے تھا۔ بہیما بہت حسین و جمیل تھی جس پر بہلول عاشق ہوگیا تھا۔ سلطان بہلول نے بہیما کے والدین کو رضامند کرکے اسے مسلمان بنا کے نکاح کرلیا جو زیبا خاتون کے نام سے بیگم بنگیٰ۔ سکندر کی تخت نشینی کے موقع پر بعض چوٹی کے پٹھان امراء میں اختلاف رائے ہوا. جن کو ایک سناری کے بیٹے کو بادشاہ بنانا ناگوار تھا. لیکن ایک تو سکندر کی ذاتی قابلیت، دوسرے سکندر کی والدہ بیگم زیبا خاتون کی کوشش نے سکندر کو کامیاب کیا۔ انتخاب کے سلسلے میں عیسٰی خاں جو بہلول کا چچازاد بھائی تھا اور خان خاناں قرملی میں سخت کلامی ہوئی مگر آخر میں سب ہی نے سکندر کو بادشاہ تسلیم کرلیا۔
                                                                                                                                                    سلطان سکندر نے تخت نشین ہونے کے بعد اپنے بھائی باریک شاہ کے پاس جو جونپور کا حاکم تھا، اپنے سکریٹری کے زریعے اتحاد اور اتفاق کا پیغام بھیجا۔ مگر باریک شاہ نے سکندر کو بادشاہ تسلیم کرنے سے انکار کردیا اور جنگ کو اتحاد پر ترجیح دی۔ آخر مجبور ہوکر سکندر نے باریک شاہ کے خلاف فوج کشی کردی اور اسے شکست دے کر کالا پہاڑ کو جو باریک شاہ کی فوجوں کا روح رواں تھا گرفتار کرلیا۔ اس وجہ سے باریک شاہ اطاعت کرنے پر مجبور ہوا۔ جب کالا پہاڑ سکندر کے سامنے لایا گیا تو سکندر نے اس سے کہا کہ آپ تو میرے چچا ہیں اور باپ کی جگہ ہیں لہذا آپکا احترام مجھ پر لازم ہے، یہ کہکر اسے رہا کردیا اور بھائی باریک شاہ کے ساتھ بھی بہت عزت سے پیش آیا۔ اس شریفانہ حسن و سلوک سے دونوں مطیع ہوگئے۔ اس سے ثابت ہوا کہ حلم کی تیغ، تیغ آہنی سے زیادہ کارگر ہوتی ہے۔ تیغ آہنی تو صرف زخم لگاتی ہے، مگر حلم کی تیغ دل کی گہرائیوں تک اتر جاتی ہے۔ کسی نے کہا ہے:
                                                                                                                                                                                                               تیغ حلم از تیغ آہن تیز تر
                                                          بل رسد لشکر ظفر انگیز تر                                                                                                                                                                                                                سلطان سکندر نے ۸۹۷ھ / ۱۴۹۱ء میں قلعہ بیانا فتح کیا اور ۹۰۰ھ / ۱۴۹۴ء میں پٹنہ اور بہار کے دیگر مقامات فتح کرکے اپنی قلمرو میں شامل کرلئے۔ بنارس کے قریب برسات اور موسم کی خرابی کی وجہ سے سلطانی لشکر کو گھوڑوں اور سامان کا بہت نقصان برداشت کرنا پڑا۔ حسین شاہ شرقی نے شاہی لشکر کی اس کمزوری سے فائدہ اُٹھا کر ایک مرتبہ اور قسمت آزمائی کی اور سکندر کے لشکر پر جو خستہ ہورہا تھا حملہ کردیا۔ مگر پٹھان باوجود گھوڑوں اور سامان کی کمی اور خوراک کی قلت کے بڑی بہادری سے لڑے اور حسین شاہ کو شکست دیکر اسے فرار ہونے پر مجبور کردیا جو بنگال کی جانب چلا گیا اور اسی پرشاہان شرقی کا خاتمہ ہوگیا۔                                                                                                                                                                                                                                            ناغڑ پٹھانوں نے اپنے سردار قبیلہ یونس خان کی ماتحتی میں سلطان بہلول لودھی اور سلطان سکندر کے ہمرکاب ہو کر ان تمام لڑائیوں  میں شریک رہے جو شاہان شرقی اور چند ہندو راجاوں سے ہوئیں۔ جن میں جنگ دہلی، جونپور، پٹنہ، اٹاوہ، شمس آباد، بیانا اور گوالیار قابل زکر ہیں ان تمام لڑائیوں میں ناغڑ پٹھانوں نے اپنی فطری شجاعت اور بہادری کے جوہر دکھائے۔                                                                                                                                                                                                                                                                                                سلطان سکندر نے مبارک خاں حاکم جونپور کی بددیانتی کا سختی سے محاسبہ کیا تو پٹھان امراء بادشاہ سے بدگمان ہوگئے۔ مگر سلطان سکندر جیسا انصاف پسند اور بیدار مغز بادشاہ پٹھانوں کے امراء کی بیجا باتوں کو کب گورا کرسکتا تھا۔ سلطان سکندر نے ناراض ہوکر ۹۱۰ھ / ۱۵۰۴ء میں پٹھان امراء کو اپنی اپنی جاگیروں پر چلے جانے کا حکم صادر فرمایا۔ اسی سلسلے میں اسمعٰیل خاں ناغڑ جنھیں سکندر نے ” دلاور خاں ” کا خظاب دیا تھا اور جو سلطان سکندر کے سکریٹری بھی تھے اپنے والد نواب یونس خاں کی جگہ نرہڑ کی جاگیر کا فرمان اپنے نام حاصل کرکے نرہڑ آگئے۔
سلطان سکندر نے ۹۲۳ھ / ۱۵۱۷ء میں داعیٰ اجل کو لبیک کہا۔ سلطان سکندر جملہ صفات سے متصف تھا، عالم، منتظم، منصف اور پابند شریعت تھا۔ پولو کے کھیل کا بہت شوقین تھا حتیٰ کہ میدان جنگ میں بھی اگر اچھا میدان مل جاتا تو پولو سے دل بہلایا کرتا تھا۔ سکندر کا دور حکومت تاریخ ہند میں خاص مقام رکھتا ہے۔ کسی شاعر نے سکندر کی تعریف میں بہت صحیح کہا ہے:
سکندر شہہ ہفت کشور نماند
                                                           نماند کسے چوں سکندر نماند                                                                                                                                                                                                      سکندر کے بعد اس کا فرزند ابراہیم ۹۲۳ھ / ۱۵۱۷ء میں باپ کی جگہ بادشاہ ہوا۔ اس نے تخت نشین ہوتے ہی اپنے بھائی جلال خاں کو فریب سے قتل کرادیا۔ اس ناعاقبت اندیش بادشاہ نے اپنے باپ دادا کا طریقہ جو نیک سلوک اور مساوات کا پٹھانوں کے ساتھ تھا چھوڑ کر اور پٹھانوں کو اپنا دست و بازو سمجھنے کے بجائے ان سے ادنیٰ ملازمین کے مثل سلوک کرنے لگا۔ اس نے اعظم ہمایوں جیسے بزرگ اور با اثر امیر کو قید خانہ میں ڈال کر قتل کرادیا۔ ابراہیم کے اس نازیبا سلوک سے دلبرداشتہ ہو کر پٹھان امراء سلطان ابراہیم کو چھوڑ کر چلے گئے اور کئی امراء جیسے دولت خاں لودھی، ابراہیم کا چچا زاد بھائی عالم خاں اور اسمعیل خاں بلوائیٰ مغل بادشاہ بابر سے ملے اور اسے ہندوستان پر لشکر کشی کرنے کی ترغیب دی جو مغلوں کے لشکر کے ساتھ ہندوستان پر حملہ آور ہوا۔ سلطان ابراہیم کی ناعاقبت اندیشی اور پٹھانوں کے اس نفاق کا وہی حشر ہوا جو قدرت کی جانب سے ہر نفاق کا مقرر ہے، یعنی اگر اتفاق اور اتحاد برقرار رہا تو آزادی ورنہ بربادی۔ رسول اللھ صلی اللھ وسلم کا ارشاد ہے ” الجماعتھ رحمتھ واتفرقھ عذاب ” اور حکیم ملت شاعر اسلام علامہ اقبال نے فرمایا ہے کہ:                                                                                                                                                                                                             من تشبہ ستم ز فیاض حیات
                                                      اختلاف تشت مقراض حیات                                                                                                                                                                                                             ۹۳۳ھ / ۱۵۲۶ء میں پانی پت کے مشہور میدان میں بابر نے ابراہیم کو فیصلہ کن شکست دی، جس میں ابراہیم مارا گیا اور اسی کے ساتھ لودھی حکومت کا خاتمہ ہوگیا۔ لودھی حکومت کا خاتمہ بابر کے ہاتھوں نہیں بلکہ خود پٹھانوں کے ہاتھوں ہوا۔ فاعتبرو نیا اوالالعیَار۔
                                                                                                                                                                                                           من از بیگانگان دیگر ننالم
                                                       کہ با من ھر چہ کرد آن آشنا کرد   (حافظ)                                                                                                                                                                                                خان بہادر میجر محمد یسٰین خان ناغڑ صاحب کی کتاب ” قبیلہ ناغڑ ” سے اقتباس
Advertisements
پٹھانوں کی حکومت کا پٹھانوں کے ہاتھوں خاتمہ

2 thoughts on “پٹھانوں کی حکومت کا پٹھانوں کے ہاتھوں خاتمہ

  1. Rehan Ghayyur Khan says:

    I am naghar ghorghast Pathan, I want to know if there is a state called ghoryani is belongs to naghar pathans. Since my father and ancestors migrated from thereafter in 1947.

    Can you help me dig deeper if they are from same naghar Pathan tribe?

    1. گڑیانی میں ناغڑ پٹھان پہلے سے آباد تھے ان کی تعداد میں اضافہ ناغڑوں کی بگڑ میں قائم ریاست کے خاتمہ کے بعد ہوا ،گڑیانی کے رہائشیوں کی غالب اکثریت ناغڑ پٹھان تھی اس کے علاوہ محمد
      زئی قبائل کے لوگ بھی رہائش پزیر تھے اور انہون نے قلیل تعداد میں ہونے کے باعث خود کو ناغڑ قبیلے میں ضم کرلیا تھا

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s